مضامین

اسمبلی انتخابات کے نتائج: سماج وادی پارٹی نے کہا ، کانگریس کا غرور ہار گیا، جے ڈی یو نے کہا، یہ پارٹی اکیلے نہیں جیت سکتی

جہاں بی جے پی کے لیے تین ریاستوں راجستھان، مدھیہ پردیش، چھتیس گڑھ اور تلنگانہ اسمبلی انتخابات میں حکومت بنانے کا راستہ صاف ہو گیا ہے، وہیں کانگریس کو تلنگانہ میں حکومت بنانے کا موقع مل رہا ہے۔ مدھیہ پردیش میں 2003 سے بی جے پی کی حکومت ہے (دسمبر 2018 میں کمل ناتھ کی قیادت میں حکومت بنی تھی، جو مارچ 2020 میں گر گئی تھی) اور اس بار امید یہ تھی کہ یہاں اینٹی انکمبنسی عنصر دیکھا جا سکتا ہے۔ اس کے علاوہ، انتخابات سے پہلے سی ایم کے چہرے کا اعلان بھی نہیں کیا گیا تھا، لہذا یہ خیال کیا جا رہا تھا کہ شاید کانگریس اور بی جے پی کے درمیان سخت مقابلہ ہوگا. لیکن تمام پیشین گوئیوں کو نظر انداز کرتے ہوئے بی جے پی نے مدھیہ پردیش میں اکثریت حاصل کر لی ہے۔ جہاں چھتیس گڑھ میں یہ مانا جا رہا تھا کہ وہاں بھوپیش بگھیل کی حکومت واپس آ سکتی ہے، لیکن یہاں بھی بی جے پی کو اکثریت مل گئی ہے، وہیں کانگریس اب یہاں اپوزیشن پارٹی کے کردار میں نظر آئے گی۔
یہاں بہوجن سماج پارٹی نے دو، بھارت آدیواسی پارٹی نے تین، راشٹریہ لوک تانترک پارٹی اور راشٹریہ لوک دل نے ایک ایک سیٹ جیتی ہے۔ 9 نشستیں آزاد امیدواروں کے حصے میں آئی ہیں۔ تلنگانہ میں کانگریس کو اکثریت حاصل ہے۔ یہاں بی جے پی نے 8 سیٹیں جیتی ہیں جب کہ بی آر ایس 40 کے اعداد و شمار کو چھو نہیں پائی ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے تین ریاستوں میں بی جے پی کی جیت کے بعد کانگریس اور اپوزیشن جماعتوں کے ‘انڈیا الائنس’ کو نشانہ بنایا۔ انہوں نے پارٹی کی جیت کو 2024 کے لوک سبھا انتخابات کا اشارہ قرار دیا۔
کانگریس لیڈر راہول گاندھی نے کہا کہ وہ مدھیہ پردیش، چھتیس گڑھ اور راجستھان کے مینڈیٹ کو عاجزی سے قبول کرتے ہیں اور تلنگانہ میں وعدوں کو پورا کرنے کا دعویٰ کرتے ہیں۔
ہندوستانی اتحاد میں شامل کانگریس کے اتحادیوں نے تین ریاستوں میں اس کی شکست کے بعد پارٹی پر شدید حملہ کیا ہے۔
اکھلیش یادو کی سماج وادی پارٹی جو کہ مدھیہ پردیش میں اسمبلی انتخابات سے قبل سیٹوں کی تقسیم کو لے کر کانگریس لیڈر کمل ناتھ کے ساتھ بحث میں الجھی ہوئی ہے، نے نتائج کو کانگریس کے تکبر کی شکست قرار دیا ہے۔
ساتھ ہی جنتا دل یونائیٹڈ نے کہا ہے کہ یہ ہندوستان اتحاد نہیں بلکہ کانگریس کی شکست ہے۔ نتائج سے واضح ہے کہ یہ جماعت تنہا الیکشن نہیں جیت سکتی۔
jamsham hair oil contact for distirbutor ship 01

kawishejameel

chief editor

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

error: مواد محفوظ ہے !!

Discover more from

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading