مہاراشٹر

رخسانہ بی کی انسانی حقوق کمیشن نے کی شکایت درج ; بے گناہ بغیر تحقیقات کے گناہ درج کرنے کا پولس پر الزام

کھام گاؤں (واثق نوی) :بلڈانہ ضلع کے ناندورہ تحصیل کے چاندوربسوہ کے ایک آپسی جھگڑے میں پولیس کی کاروائی پورے ضلع میں موضوع بحث بنا ہوا ہے۔ جو انصاف کے لئے انسانی حقوق کمیشن کی عدالت میں بھی پہونچ گیا۔ جس سے پورے ضلع میں کھلبلی مچ گئی۔
ملی جانکاری کے مطابق چاندوربسوہ کی ساکن رخسانہ بی مشتاق اللہ خان کا اپنے پڑوسی کے ساتھ 13 جون کو بیت الخلا کے تعمیر کے تعلق سے جھگڑا ہوا تھا۔ جس میں پولیس نے رخسابہ بی کے خلاف ہی کاروائی کرنے کا الزام رخسانہ بی پولس پر لگارہی ہے۔ اس بے جا اور بغیر تحقیقات کے درج گناہ کے تعلق سے رخسانہ بی نے پولس محکمہ کے ضلعی ، ریاستی و قومی سطح کے اعلی افسران و وزراء تک شکایت کی تھی۔ یقین دہانی کے باوجود بھی کوئی کاروائی نہیں ہونے پر بالآخر رخسانہ بی نے ,10 نومبر کو انسانی حقوق کمیشن کا دروازہ کھٹکھٹایا۔ جس پر انسانی حقوق کمیشن نے 2 دسمبر کو عطا اللہ خان و اسوقت کے پولیس افسر کے خلاف شکایت درج کرکے کاروائی شروع کردی۔
واضح رہے کہ اس ناانصافی کے خلاف خبر شائع کرنے پر نوجوان صحافی و سماجی خدمت گار وحید خان پر بھی ایک بزرگ خاتون کی شکایت پر گناہ درج کیا ۔ اس تعلق سے وحید خان نے بھی اعلی افسران و انسانی حقوق کمیشن تک کے اس کیس کی تحقیقات کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔ لیکن ابھی تک اس تعلق سے بھی کوئی کاروائی نہیں کی گئی۔ اس پورے کیس کے تعلق سے رخسانہ بی کے فرزند شاکر خان نے نمائندے کو معلومات دیتے ہوئے بتایا کہ ہمیں یقین ہے کہ ہمارے خلاف پولیس نے بغیر تحقیقات کے جو کاروائی کی ، گناہ درج کیا ہمارے گھر میں بنا سرچ وارنٹ کے تلاشی لی ۔ انسانی حقوق کمیشن کی عدالت میں سب سامنے سجائے گا ہمیں انصاف ملے گا۔ بے جا ظلم و زیادتی کرنے والے افراد کے خلاف کاروائی ہوگی۔

kawishejameel

Jameel Ahmed Shaikh Chief Editor: Kawish e Jameel (Maharashtra Government Accredited Journalist) Mob: 9028282166,9028982166

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
error: Content is protected !!
%d bloggers like this: