مہاراشٹر

تعلیم کے شعبے کے مسائل حل کرنا ہماری ذمہ داری…… ایڈوکیٹ کرن راؤ سرنائک

اکولہ: (واثق نوید) : امراوتی ڈویژن ٹیچر ایم ایل اے ایڈوکیٹ۔ کرن راؤ سارنائک نے آکولہ کے سرکاری ریسٹ ہاؤس میں ٹیچرس یونین کے نمائندوں اور انتظامیہ کے نمائندوں کی میٹنگ لی۔ اور اساتذہ اور شعبہ تعلیم کے مسائل پر تفصیلی گفتگو کی ۔ اس موقع پر ان نکات پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اعلانیہ، غیر اعلانیہ، جزوی طور پر امداد یافتہ اسکولوں کو مروجہ قواعد کے مطابق اضافی گرانٹ دیا جائے۔
ساتویں پے کمیشن کی دوسری اور تیسری بقایا اقساط دیوالی سے پہلے نقد ادا کی جائے۔ اساتذہ کو بی۔ایل۔او۔ کے کام سے نجات دی جائے۔۔ شہری علاقوں میں دیہی علاقوں کی اسکولوں کی طرح عمارتوں کو پراپرٹی ٹیکس سے مستثنی رکھا جائے . اسکولوں سے کمرشل ریٹ لیے بغیر گھر کے نرخ پر بجلی کا بل وصول کیا جائے۔ پروفیسر پرکاش ڈولے اور پرنسپل الحاج سرفراز نواز خان کی قیادت میں اس وفد نے دیگر اور مطالبات پر بھی تبادلہ خیال کیا۔ حکومت اساتذہ سے % 100 کام لے رہی ہے اور% 20 %40تنخواہ دے رہی ہے۔ پروفیسر دولے نے کہا کہ یہ معاملہ مساوی کام مساوی تنخواہ ایکٹ کی خلاف ورزی ہے۔ اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اس غیر منصفانہ اور امتیازی پالیسی کو روکے اور موجودہ قواعد کے مطابق مرحلہ وار اضافہ اور %100تنخواہ کی پالیسی نافذ کرے اور اساتذہ کو استحصال سے بچائے ۔ اس موقع پر پرنسپل آنند سادھو، ساگر دیشمکھ، لیاقت علی میرصاحب، عبدالحسیب، مجیب الحق، اکرام الدین، عبدالرزاق، اشتیاق حسین، مبین الرحمان، محمد افسر، فیاض انعامدار، دیپک بیڈکر اور دیگر تنظیموں کے نمائندے اور اساتذہ بڑی تعداد میں موجود تھے۔
ٹیچر ایم ایل اے ایڈوکیٹ کرن راؤ سرنائک نے کہا کہ وہ جلد ہی ریاست کے وزیر اعلیٰ عزت مآب ایکناتھ جی شندے سے ملاقات کریں گے اور تمام مسائل پر کارروائی کریں گے۔ اس کے علاوہ جلد ہی ضلع میں پرائمری مڈل اور ہائی اسکول مسائل حل کرنے کی کوشش کریں گے۔ انہوں نے شرکاء سے 2 اکتوبر کو سانگلی میں منعقد ہونے والے ریاستی سطح کے کانفرنس میں شرکت کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ اساتذہ کی تنخواہوں کی ٹیم، ٹریژری آفس کی سطح پر مسائل کے حل کے حوالے سے میٹنگ کا اہتمام کریں گے۔ اور اسکول انتظامیہ کے مسائل کے حوالے سے میٹنگ منعقد کریں گے۔

kawishejameel

Jameel Ahmed Shaikh Chief Editor: Kawish e Jameel (Maharashtra Government Accredited Journalist) Mob: 9028282166,9028982166

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
error: Content is protected !!
%d bloggers like this: