اہم خبریں

حلال سرٹیفکیٹ دئے جانے پر پابندی مذہبی آزادی پرقدغن اورغیردانشمندانہ قدم …..آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ

نئی دہلی: 26،نومبر 2023: آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نے یوپی حکومت کے اس اقدام پر سخت تنقید کی جس میں اس نے مسلمانوں کے بعض رجسٹرڈ اداروں کے ذریعہ حلال سرٹیفکیٹ جاری کرنے کو غیر قانونی قرار دیا ہے۔ بورڈ کے مطابق یہ فیصلہ مذہبی معاملات اور مذہبی آزادی میں مداخلت اور ملک کے مفاد کے منافی ہے۔
آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے ترجمان ڈاکٹر سید قاسم رسول الیاس نے ایک پریس بیان میں کہا ہے کہ اسلام نے اپنے متبعین کے لئے کھانے پینے اور رہن سہن کے کچھ آداب اور ضوابط متعین کئے ہیں جس کی پابندی مسلمانوں کے لئے ضروری ہے۔ ایسا ہی معاملہ دیگر مذاہب کا بھی ہے۔ خورد و نوشت کے معاملے میں اسلام کے اصول بہت واضح ہیں۔ بعض چیزیں مکروہات کے دائرے میں آتی ہیں تو بعض قطعی حرام ہیں جن سے بچنا مسلمانوں پر فرض ہے۔ مسئلہ صرف ذبیحہ اور غیر ذبیحہ تک محدود نہیں ہے بلکہ بہت ساری مصنوعات ایسی ہوتی ہیں جن میں ان چیزوں کی آمیزش ہوتی ہے جو اسلام میں حرام کے درجہ میں آتی ہیں جن سے بچنا ہر مسلمان کے لئے بے حد ضروری ہے، جیسے شراب اور سور کا گوشت یا چربی وغیرہ۔ جس طرح مسلمانوں میں حلال اور حرام کی اصطلاح رائج ہے اسی طرح ہندؤں کے یہاں شُدھ اور اشُدھ کی اصطلاح ہے اور دیگر مذاہب میں دیگر اصطلاحات۔
انہوں نےکہا کہ اسی طرح جو کمپنیاں اس میدان میں کام کررہی ہیں وہ سب حکومت کے ضوابط کے تحت رجسٹرڈ ہیں، اتنا ہی نہیں خود وزارت برائے کامرس نے بھی ایسا سرٹیفکیٹ حاصل کرنا لازمی کیا ہوا ہے۔ حلال سرٹیفکیٹ صارف کو یہ بتاتا ہے کہ آیا کوئی پروڈکٹ حلال مانے جانے کی ضروریات ومعیارات پر پورا اترتا ہے یا نہیں۔ ہندوستان میں حلال مصنوعات کی تصدیق کے لئے کوئی سرکاری ریگولیٹری ادارہ نہیں ہے بلکہ مختلف حلال سرٹیفیکیشن ایجنسیاں ہیں جو مصنوعات یا کھانے پینے کے اداروں کو حلال سرٹیفکیٹ فراہم کرتی ہیں۔ ان کی قانونی حیثیت مسلم ہے صارفین کے درمیان، ان کے نام کی شناخت کے ساتھ ساتھ اسلامی ممالک میں بھی ریگولیٹرز کی جانب سے پہچان میں مضمر ہے۔ اب دنیا بھر میں بالخصوص مغربی ممالک میں حلال پرو ڈکٹس اور حلال سرٹیفکیٹ کا چلن بہت تیزی سے بڑھ رہا ہے۔ خود ہندوستان سے جو گوشت مشرق وسطی کے ممالک کو برآمد کیا جاتا ہے اس پر اس کی تصدیق کی جاتی ہے کہ یہ حلال طریقہ پر ذبح کیا ہوا ہے۔ حلال سرٹیفائیڈ ہونے سے ہندوستانی مصنوعات کو لے کر ہندوستان سمیت دنیا بھر کے مسلمانوں میں ایک بھروسہ پیدا ہوتا ہے۔ اس سے برآمدات میں تعاون اور کاروبار میں منافع ملتا ہے۔
حلال سرٹیفیکیشن پر پابندی لگاکر دراصل یوگی حکومت ہندوستانی مصنوعات کی مسلم و دیگر ممالک میں بر آمدات کو متأثر کرے گی اور اس سے صرف ان کمپنیوں کو ہی نقصان نہیں ہوگا بلکہ ہندوستان کی معیشت اور زرمبادلہ کا کاروبار بھی شدید طور متأثر ہوگا۔ مودی اور یوگی حکومتوں کو اپنے سیاسی فائدہ اور ہندو مسلم منافرت کے ایجنڈے سے اوپر اٹھ کر ملک کے مفاد اور مذہبی آزادی کے دستوری تقاضے کو ہی ترجیح دینی چاہئے۔ ڈاکٹر الیاس نے آگے کہا کہ مسلم پرسنل لا بورڈ مطالبہ کرتا ہے کہ یوگی حکومت اپنے اس دستور مخالف اور ملک مخالف اقدام کو فی الفور واپس لے اور ہر بات کو ہندو مسلم منافرت اور سماجی تقسیم کا حصہ بنانے سے گریز کرے۔

kawishejameel

chief editor

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

error: مواد محفوظ ہے !!

Discover more from

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading