مہاراشٹر

رشوت خوری میں محکمہ ریونیو سرفہرست، سو روپے سے لاکھوں روپے تک کا مطالبہ، عام شہریوں کی لوٹ مار

اورنگ آباد: (کاوش جمیل نیوز) :محکمہ اینٹی کرپشن نے عام شہریوں سے جائز اورسرکاری کام کے لیے رشوت لینے والوں کے خلاف کارروائی کی ہے۔ گزشتہ سال، محکمہ رشوت ستانی کی جانب سے 125 جال بچھائے گئے، کل 168 سرکاری ملازمین۔ اس کے علاوہ پرائیویٹ افراد کے خلاف بھی مقدمات درج کیے گئے ہیں۔ اورنگ آباد سپرنٹنڈنٹ کے دفتر کے تحت آنے والے چار اضلاع اورنگ آباد، جالنہ، بیڑ، عثمان آباد میں یہ اطلاع سامنے آئی ہے کہ رشوت لینے والے ان افسران اور ملازمین نے ایک سال کے دوران 48 لاکھ 94 ہزار 730 روپے کی رشوت قبول کی۔ یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ اورنگ آباد ڈویژن ریاست میں کی گئی کل کارروائی میں کامیاب ٹریپ کے لحاظ سے ناسک اور پونے کے بعد تیسرے نمبر پر ہے۔
محکمہ رشوت ستانی کے فراہم کردہ اعداد و شمار کے مطابق ریاست بھر میں کل 774 جال بچھائے گئے ہیں۔ اس میں ایک ہزار 83 سرکاری ملازمین اور دیگر پرائیویٹ افراد پر رشوت ستانی کے مقدمات درج کیے گئے ہیں۔ یہ بات سامنے آئی ہے کہ ریاست بھر میں متعلقہ سرکاری ملازمین سے 4 کروڑ 53 لاکھ 36 ہزار 255 روپے کی رشوت طلب کی گئی ہے۔ ریاست میں ریونیو، لینڈ ریکارڈ اور رجسٹریشن ڈیپارٹمنٹ کے لیے 192 جال بچھائے گئے ہیں، جن میں 256 افسران و ملازمین اور دیگر افراد کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ ریاست میں بدعنوانی کے معاملے میں محکمہ پولیس دوسرے نمبر پر ہے۔ ریاست بھر میں 139 جال میں 192 پولیس افسران اور اہلکار پھنس چکے ہیں۔ پنچایت سمیتی میں کل 78 چھاپوں میں 115 افراد کے خلاف کیس درج کیے گئے ہیں۔ میونسپل کارپوریشن میں 41 ٹریپس میں 56 لوگوں کو حراست میں لیا گیا ہے، اور محکمہ رشوت ستانی نے ‘مہاوترن’ کے 45 جال میں کل 61 لوگوں کے خلاف کارروائی کی ہے۔
اورنگ آباد ڈیویژن میں کی گئی کارروائی میں محکمہ ریونیو کے 22، محکمہ پولیس کے 24، پنچایت سمیتی کے 12، میونسپل کارپوریشن کے ساتھ ساتھ ‘مہاوترن’ ملازمین کے خلاف رشوت ستانی کے معاملے سامنے آئے ہیں۔ اورنگ آباد ڈویژن میں اب تک 168 لوگوں کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ گزشتہ سال 113 جال کامیاب ہوئے تھے۔ یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ اس سال پھندے کی تعداد 12 مزید ہے۔ اطلاعات یہ بھی سامنے آ رہی ہیں کہ اورنگ آباد ڈویژن کے تحت عثمان آباد کا اس سال آپریشن اچھا رہا ہے۔ عثمان آباد ڈویژن نے پچھلے سال سے زیادہ آٹھ ٹریپس میں کامیابی حاصل کی ہے۔ اورنگ آباد ڈویژن نے اس سال بھی 46 کارروائیوں کے پچھلے سال کے اعداد و شمار کو برقرار رکھا ہے۔
اورنگ آباد ڈویژن میں گزشتہ سال کی کارروائی میں نیا راشن کارڈ دینے کے لیے 200 روپے رشوت مانگنے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ اس کے علاوہ، عثمان آباد میں ضلع پریشد کی ایک ٹیچر کو اس کی تجویز میں کوئی غلطی نہیں ہونی چاہیے۔ اس کے لیے 300 روپے رشوت لینے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ محکمہ واٹر کنزرویشن میں کام کی ادائیگیوں کی وصولی کے لیے ساڑھے آٹھ لاکھ کی رشوت لی گئی۔ اورنگ آباد سٹی پولیس میں ایک سب انسپکٹر نے ایک لاکھ کی رشوت لی اور بیڑ میں ایک معاملے میں محکمہ پولس کے ایک ملازم نے تین لاکھ کی رشوت مانگی۔ جبکہ محکمہ مہاوترین کے ملازمین نے بجلی کے میٹر کی تنصیب یا دیگر کاموں کے لیے رشوت طلب کی۔ اورنگ آباد رجسٹریشن ڈپارٹمنٹ کے ایک افسر نے ڈیولپر سے ایک لاکھ کی رشوت مانگی۔ لڑکی کو ادارے میں نوکری مل جاتی ہے۔ یہ کہہ کر تیرہ لاکھ روپے رشوت طلب کرنے کا معاملہ بھی سامنے آیا ہے۔
Aurangabad distributor jamsham hair oil

kawishejameel

chief editor

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

error: مواد محفوظ ہے !!

Discover more from

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading