مہاراشٹر

نائب وزیراعلیٰ اجیت پوارکو فڈنویس کا خط ؛ کہا نواب ملک کا گرینڈ الائنس(مہا یوتی) میں شامل ہونا درست نہیں ؛ پڑھیں رپورٹ

ممبئی: (کاوش جمیل نیوز) : این سی پی ایم ایل اے اور سابق ریاستی وزیر نواب ملک نے آج سرمائی اجلاس کے موقع پر قانون ساز اسمبلی کی کارروائی میں حصہ لیا۔ اس وقت اس بات پر خوب بحث و تکرار ہوئی کہ وہ ہال میں بالکل کہاں بیٹھیں گے۔ لیکن آخر کار انہوں نے حکمران بنچ پر بیٹھنے کا فیصلہ کیا۔ اس کے بعد قانون ساز کونسل میں ردعمل دیکھنے میں آیا۔ وہیں اپوزیشن لیڈر امباداس دانوے نے سوالیہ نشان اٹھاتے ہوئے نائب وزیر اعلی دیویندر فڑنویس کو شکنجے میں پھنسانے کی کوشش کی۔ لیکن فڑنویس نے دانوے کے الزام کی تردید کی۔ اب فڑنویس نے اجیت پوار کو خط لکھا ہے اور اس معاملے پر تفصیلی موقف پیش کیا ہے۔
“اقتدار آتا ہے اور جاتا ہے۔ لیکن ملک اقتدار سے زیادہ اہم ہے…”، دیویندر فڑنویس نے یہ خط ٹوئٹر اور فیس بک پر پوسٹ کیا ہے۔ ڈپٹی چیف منسٹر اجیت پوار کو لکھے گئے خط میں فڑنویس نے کہا، ’’سابق وزیر اور رکن اسمبلی نواب ملک آج مقننہ کے احاطے میں آئے اور کارروائی میں حصہ لیا۔ ودھان سبھا کے رکن کی حیثیت سے انہیں یہ حق بھی حاصل ہے۔ میں شروع میں واضح کر دیتا ہوں کہ ہماری ان سے کوئی ذاتی دشمنی یا رنجش نہیں ہے۔ لیکن جس انداز میں ان پر الزام لگایا گیا ہے اس کے پیش نظر ہماری رائے ہے کہ انہیں گرینڈ الائنس (مہایوتی) میں لینا مناسب نہیں ہوگا۔ فی الحال وہ صرف طبی بنیادوں پر ضمانت پر باہر ہیں۔ اگر ان پر الزامات ثابت نہیں ہوتے تو ہمیں ان کا خیر مقدم کرنا چاہیے۔ تاہم ہماری واضح رائے ہے کہ جب ایسے الزامات ہوں تو انہیں گرینڈ الائنس (مہایوتی) کا حصہ بنانا درست نہیں۔ تسلیم کرتے ہیں کہ یہ مکمل طور پر ہمارا حق ہے کہ ہم کس کو اپنی پارٹی میں شامل کریں۔ تاہم، ہر جزو پارٹی کو یہ سوچنا ہوگا کہ وہ مہایوتی کی راہ میں رکاوٹ نہیں بنے گی، اس لیے ہم ان کے خلاف ہیں،‘‘ دیویندر فڈنویس نے اس خط کے ذریعے اپنے مضبوط موقف کا اظہار کیا ہے۔
دیویندر فڑنویس نے مزید لکھا، “انہیں غداروں سے تعلق رکھنے کے الزام میں گرفتار کیا جاتا ہے، اُس کے باوجود نواب ملک کو سابقہ حکومت وزیر اعلیٰ اور مہا وکاس اگھاڑی حکومت کے خیالات سے اتفاق نہیں کر پائیں گے، جس نے انہیں وزیر بنا رکھا تھا۔ مجھے امید ہے کہ آپ ہمارے جذبات کا خیال رکھیں گے۔‘‘


jamsham hair oil contact for distirbutor ship 01

kawishejameel

chief editor

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

error: مواد محفوظ ہے !!

Discover more from

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading