مضامین

اب کوئی اور کمال خان نہیں ہوگا…رویش کمار کی قلم سے

ravish kumarرویش کمار
این ڈی ٹی وی انڈیا

انہوں نے نہ صرف صحافت کی نمائندگی کی، صحافت کے اندر موجود جذبات اور زبان کی نمائندگی نہیں کی بلکہ اپنی رپورٹ کے ذریعے اپنے شہر لکھنؤ اور اپنے ملک ہندوستان کی نمائندگی بھی کی۔ کمال سے مراد پرانا لکھنؤ بھی تھا جسے مذہب کے نام پر نفرت کے طوفان نے بدل دیا تھا۔ وہاں کے حکمران کی زبان بدل گئی۔ آئینی عہدوں پر بیٹھے لوگ کسی کو مارنے یا گولی مار کر آخرت میں لے جانے کی زبان بولنے لگے۔ اس دور میں بھی کمال خان وہ امام باڑہ ہی رہے جس کے بغیر لکھنؤ کی سرزمین کا چہرہ ادھورا رہ جاتا ہے۔
کمال خان کو لکھنؤ سے الگ کرکے کوئی نہیں سمجھ سکتا۔ کمال خان جیسا صحافی صرف کام سے جانا جاتا تھا لیکن آج کے لکھنؤ میں ان کی شناخت مذہب سے جڑی ہوئی تھی۔ حکومت کے اندر بیٹھے کمزور ارادوں کے لوگ ان سے دوری بنائے رکھتے تھے۔ کم دکھایا اور بہت کم اظہار کیا۔ سو باتوں میں سے ایک لائن میں کہتا تھا جو آپ جانتے ہیں۔ اگر میں پوچھوں تو کہوں گا کہ میں مسلمان ہوں۔ ایک صحافی کو اس کے مذہب کی شناخت میں دھکیلنے کی کوششوں کے درمیان وہ صحافی خود کو عوام کی طرف دھکیلتا رہا۔ ان کی ہر رپورٹ اس حقیقت کی گواہ ہے۔
یہ کمال خان کا کارنامہ ہے کہ آج انہیں یاد کرتے ہوئے عام سامعین بھی ان کے کام کو یاد کر رہے ہیں۔ ایسے وقت میں یاد رکھنا کتنی رسم ہو جاتی ہے لیکن لوگ جس طرح کمال خان کے کام کو یاد کر رہے ہیں، ان کے مختلف کلپس کے لنکس کوشیئر کر رہے ہیں، اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ کمال خان نے اپنی پوری کوشش کی ہے۔ سامعین کے لیے بھی۔ میں ٹویٹر دیکھ رہا تھا۔ اس کی لاتعداد رپورٹس کے حصے شیئر کیے جا رہے تھے۔ کمال خان کے لئے یہی ہونا ہے۔ یہ ان کو حقیقی خراج تحسین ہے .
وہ کام کرتے ہوئے ہم نے ایک کمال خان کو دیکھا اور سنا ہے۔ جس کا جاننا بھی ضروری ہے تاکہ معلوم ہو جائے کہ احمد فراز اور حبیب جالب کے شیروں کو سن کر کمال خان ایک نہیں ہو جاتے۔ وہ دن بھر سوچتا تھا کہ دو منٹ کی رپورٹ لکھوں۔ دن بھر پڑھتے لکھتے رہتے تھے۔ ان کے ساتھ کام کرنے والے جانتے تھے کہ کمال بھائی ایسے کام کرتے ہیں۔ کتنا اچھا ہو کہ کوئی اپنا کام اتنی عزت اور لگن سے کرے۔ اگر ہم ایودھیا پر ان کی سینکڑوں رپورٹس کو ایک جگہ ایک ساتھ رکھیں تو پتہ چلے گا کہ کمال خان کی پوری اتر پردیش میں الگ ایودھیا تھی۔ اس ایودھیا کے بارے میں فخر کے نام پر نفرت کی آگ میں بھڑکائے ہوئے ایک پریشان ملک سے وہ کتنی آسانی سے بات کر سکتا تھا۔ وہ اپنے اندر ابلتی نفرت کی آگ کو ٹھنڈا کرتا تھا۔ وہ ڈوب کر تلسی کی رامائن پڑھتا تھا اور گیتا بھی۔ ایسے صحافی نہیں تھے جنہوں نے کہیں سے ایک دو لائنیں چرا کر اپنی رپورٹ کو جان بخشی۔ وہ جانتے تھے کہ یوپی کا سماج مذہب میں ڈوبا ہوا ہے۔ سیاست اس کی بے گناہی کو ایک گرم طوفان میں بدل دیتی ہے۔ اس معاشرے سے بات کرنے کے لیے کمال نے بہت سی مذہبی کتابوں کا گہرا مطالعہ کیا ہوگا۔ اسی لیے جب کمال خان بولتے تھے تو سننے والا بھی رک جاتا تھا۔ سنتے تھے۔
کیونکہ کمال خان ان کی نظروں سے گزر کر ان کے ذہن میں اتر جاتا تھا اور اپنے ضمیر کو ہلکے پھلکے ہاتھوں سے جھنجھوڑ کر یاد دلاتا تھا کہ اگر ہر چیز کا مطلب محبت اور بھائی چارہ نہیں تو اور کیا ہے۔ اور یہی بات یوپی کے مذہب اور مٹی کے بزرگوں نے بتائی ہے۔ جس اتھارٹی پر کمال خان رام اور کرشن سے متعلق تنازعات کی رپورٹنگ کر سکتے تھے، شاید ہی کوئی ایسا شائستگی سے کر سکے کیونکہ ان کے پاس معلومات تھیں۔ جس کے لیے وہ بہت مطالعہ کیا کرتے تھے۔ جب وہ بنارس جاتے تھے تو بہت سی کتابیں خریدتے تھے۔ گوگل کے پہلے زمانے میں جب کمال خان رپورٹنگ کے لیے باہر جاتے تھے تو اس مسئلے سے متعلق کتابیں لے جاتے تھے۔
وہ متکبر بھی تھا کیونکہ وہ نظم و ضبط کا پابند تھا۔ اس لیے وہ کہتے تھے کہ نہیں۔ وہ رپورٹر نہیں ہے جو ہر بات کو ہاں کہہ دیتا ہے۔ کمال خان کے ہاں کہنے کا مطلب یہ تھا کہ نیوز روم میں موجود کسی نے سکون کا سانس لیا۔ وہ ناجائز یا ضد سے نہیں کہتے تھے بلکہ کوئی کہانی نہ سنانے کی وجہ تفصیل سے بتاتے تھے۔ یہ کام کرتے ہوئے کمال خان اپنے اردگرد کے لوگوں کو یہ اصول یاد دلاتے تھے کہ سب کو یاد رکھنا چاہیے۔ ایڈیٹر ہو یا نیا رپورٹر۔ رپورٹر جتنا زیادہ اپنے دلائل کو نہیں کہتا، وہ اپنے ادارے کے لیے اتنا ہی اچھا کرتا ہے کیونکہ ایسا کرتے ہوئے وہ اپنے ادارے کو غلط اور کمزور رپورٹس دینے سے بھی بچاتا ہے۔
اب کوئی اور کمال خان نہیں ہوگا۔ کیونکہ یہ ملک اس عمل کو دہرانے کی اخلاقی طاقت کھو چکا ہے جس کے ذریعے ایک کمال خان بنایا جاتا ہے۔ اس کی مٹی میں اتنے کمزور لوگ ہیں کہ وہ اپنے اپنے اداروں میں کمال خان پیدا کرنے کی طاقت نہیں رکھتے۔ ورنہ کمال خان کی جس زبان پر ہر دوسرے چینل کی تعریف کی جاتی ہے، ان چینلز میں کوئی نہ کوئی کمال خان ضرور ہوتا۔ کمال خان این ڈی ٹی وی کے چاند تھے۔ جن کی باتوں میں ستاروں کی چمک تھی۔ چاندنی پر سکون تھی۔

kawishejameel

Jameel Ahmed Shaikh Chief Editor: Kawish e Jameel (Maharashtra Government Accredited Journalist) Mob: 9028282166,9028982166

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں
Close
error: Content is protected !!